بنیادی صفحہ » الیکشن »

عام لوگ اتحاد

Try WordPress Hosting Free for 30 Days | Cloudaccess.net

عام لوگ اتحاد

الیکشن کمیشن کے پاس رجسٹرڈ جماعتیں
 
الیکشن کمیشن آف پاکستان میں رجسٹرڈ جماعتوں میں سے ایک جماعت عام لوگ اتحاد بھی ہے۔ جب یہ جماعت رجسٹرڈ ہوئی اس وقت اس کے قائم مقام چیئرمین جسٹس (ریٹائرڈ) وجیہہ الدین احمد تھے۔ اس پارٹی کا پہلا اجلاس گلشن اقبال کراچی میں ہوا تھا، اس جلسے کی مختلف بات یہ تھی کہ اس میں نہ تو اسٹیج پر خصوصی نشستیں تھیں اور نہ پہلی صف میں صوفے بچھائے گئے تھے بلکہ جسٹس وجیہہ الدین احمد حاضرین جلسہ کے درمیان پیچھے ہی بیٹھ کر مقررین جلسہ کی تقریریں سنتے رہے اور آخر میں اسٹیج پر آ کر حاضرین سے مختصر خطاب کیا اور پارٹی کے منشور کے اہم نکات سے لوگوں کو آگاہ کیا۔
جسٹس (ریٹائرڈ) وجیہہ الدین احمد نے کہا کہ ہماری نظر میں عام لوگ وہ ہیں جن کی ماہانہ آمدنی ایک لاکھ روپے سے کم ہے جبکہ ملک کے 99 فیصد عام لوگوں کے حقیقی نمائندے اسمبلیوں میں نہیں جا پاتے، انہوں نے پارٹیوں کے ٹکٹوں کی خرید و فروخت کے خلاف ایک نیا نظام تجویز کیا ہے جس کے مطابق ملک کے ہر قومی اور صوبائی حلقے میں کمیٹیاں بنائی جائیں گی جو اپنے اپنے حلقوں میں رہائش پذیر قابل انتخاب دس دس افراد کے نام تجویز کریں گی۔ پھر ہر حلقے سے نامزد افراد کے بارے میں گیلپ سروے کروایا جائے گا جن میں سے تین بہترین افراد کے ناموں پر پارٹی کی مرکزی قیادت غور کرنے کے بعد قومی اور صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے لیے ان امیدواروں کو نامزد کیا جائے گا۔
علاوہ ازیں پارٹی کے عہدیدار انتخابی حلقے کی سیاست میں حصہ نہیں لے سکیں گے، اگر کوئی شخص ایسا چاہے گا تو اسے اپنے پارٹی کے عہدے سے استعفیٰ دینا ہوگا، جس کے دو سال بعد وہ حلقے کی سیاست میں حصہ لینے کا اہل قرار پائے گا۔ اس کے علاوہ ریٹائرڈ سول اور فوجی بیوروکریٹس اور پروفیشلنز پارٹی کی ایڈمنسٹریشن چلائیں گے۔
عام لوگ اتحاد کے منشور میں فروغ تعلیم، صحت، روزگار، پبلک ٹرانسپورٹ، ماحولیات، شجر کاری، فراہمی اور نکاسی آب اور استعمال شدہ پانی کو صاف کرکے دوبارہ استعمال کرنے کے منصوبوں کے علاوہ ماضی میں لائی جانے والی زرعی اصلاحات پر عملدرآمد جیسے اہم نکات شامل ہیں۔
جسٹس (ریٹائرڈ) وجیہہ الدین احمد کا کہنا ہے کہ پاکستان خوراک کے معاملے میں خود کفیل ملک ہے اور ہمارے پاس بیرون ملک پاکستانیوں کی جانب سے زرمبادلہ آتا ہے لہٰذا ہم درآمدات اور برآمدات میں توازن پیدا کرکے بیرونی قرضے بتدریج ختم کر سکتے ہیں، جس کی وجہ سے ہمارے بجٹ کا بڑا حصہ قرضوں کی اقساط اور سود کی ادائیگی میں نکل جاتا ہے۔
وہ چاہتے ہیں کہ چھوٹے ملازمین اور سیکریٹری کی تنخواہوں کے فرق کو نچلے گریڈ کے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کرکے کم کیا جائے تاکہ غریب طبقات میں خوشحالی آئے اور ان کے بچے پڑھ لکھ کر آگے آئیں۔ سرکاری افسران اور اراکین اسمبلی کے لیے لازم قرار دیا جائے کہ وہ پبلک ٹرانسپورٹ میں سفر کریں، سرکاری اسپتالوں سے علاج کروائیں اور اپنے بچوں کو سرکاری تعلیمی اداروں سے تعلیم دلوائیں۔ صرف ایسا ہونے کی صورت میں ہی یہ تمام شعبوں میں بہتری آ سکتی ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اس کے لیے انہیں مراعات یافتہ طبقات کی شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑے گا کیونکہ وہ یہ کبھی بھی نہیں چاہیں گے کہ حکومتی سطح پر ان کی مراعات میں ایک دھیلے کی بھی کمی کی جائے اور عام لوگوں کے حالات زندگی بہتر بنانے کی کوئی سنجیدہ کوشش کی جائے۔ پاکستان کے بدعنوان حکمراں طبقات کو یہ بات کبھی گوارا نہیں ہوگی کہ عام لوگ اسمبلیوں میں پہنچیں اور عوامی مسائل حل کرنے کی حقیقی کوشش کریں۔
اس پارٹی کی بد قسمتی سے جلد ہی پارٹی کے عہدوں پر چپقلش شروع ہو گئی اور آجکل پارٹی کی چیئرمین شپ پر تنازعہ کھڑا ہو گیا۔ یہ تنازعہ جسٹس (ریٹائرڈ) وجیہہ الدین احمد اور ظفر عزیز خان میں ہے، جن کا بطور چیئرمین نام الیکشن کمیشن آف پاکستان کی ویب سائٹ پر بھی درج ہے۔ تاہم یہ کیس الیکشن اکمیشن آف پاکستان کے ممبر سندھ غفار سومرو کی سربراہی میں تین رکنی بینچ سن رہا ہے۔ آخری سماعت کے روز چیئرمین شپ کے دعوے دار جسٹس ( ر ) وجیہ الدین احمد اور ظفر عزیز الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے، فریقین وکلاء کے دلائل کے بعد الیکشن کمیشن نے عام لوگ اتحاد پارٹی کی چیئرمین شپ سے متعلق درخواست پر محفوظ کر لیاجو اب فیصلہ 8 مارچ کو سنایا جائے گا۔

اپنی رائے دیں

%d bloggers like this: