بنیادی صفحہ » الیکشن »

پولنگ سٹیشن کی معلومات اب گوگل میپ پر

Try WordPress Hosting Free for 30 Days | Cloudaccess.net

پولنگ سٹیشن کی معلومات اب گوگل میپ پر

ووٹر الیکشن کمیشن کی ویب سائٹ پر پولنگ سٹیشن کی معلومات اور راستہ بھی دیکھا جا سکے گا
منصور مہدی
الیکشن کمیشن آف پاکستان تمام پولنگ سٹیشنوں کے نقشے کی معلومات پر مبنی جغرافیائی معلوماتی نظام (GIS)کا کام کر رہا ہے، اس سسٹم کے ذریعے ووٹرالیکشن کمیشن آف پاکستان کی ویب سائیٹ پر جا کر اپنے پولنگ سٹیشن کی معلومات اوروہاں پہنچنے کیلئے گوگل کے نقشہ پر راستہ دیکھ سکےں گے۔
تاہم الیکشن کمیشن آف پاکستان کی ویب سائٹ پر جی آئی ایس سسٹم کا اطلاق مورخہ 20-01-2018تک قومی اسمبلی کے این اے 4، پشاور IV، این اے 120، لاہورIII، این اے 218، مٹیاری کم حیدرآباد ( اولڈ حیدرآبادI) ، این اے 245کراچیVII، این اے 258کراچیXXتک ہو سکا ہے، اسی طرح صوبائی اسمبلی خیبر پختونخوا میں پی کے8پشاورVIII، پنجاب صوبائی اسمبلی میں پی پی 20چکوالI، سندھ میں پی ایس 76، دادوIII, پی ایس106کراچیXVIII، پی ایس114کراچیXXVI، پی ایس 115، کراچی XXVII، پی ایس 117، کراچیXXIX، پی ایس127کراچیXXXIX، تک مکمل ہو سکا ہے۔
الیکشن کمیشن آف پاکستان تمام اہل ووٹرز کی معلومات پر مبنی انتخابی فہرستوں کی کمپیوٹرائزیشن اور نتائج پیش کرنے کا نظام بھی متعارف کروا رہا ہے،الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق انتخابات2018 کیلئے کمپیوٹرائز انتخابی فہرستوں کے نظام (CERS)کا تقریباً آدھا کام مکمل ہو چکا ہے،الیکشن کمیشن کو امید ہے کہ اس سے انتخابی فہرستوں میں ووٹوں کے ڈبل اندراج سے متعلق تمام شکایات کا خاتمہ ہو جائے گا، اس کے علاوہ ووٹوں کی رجسٹریشن اور منتقلی بھی موثر اور آسان انداز میں ہو سکے گی۔
سی ای آر ایس سسٹم کے متعارف ہونے سے پہلے الیکشن کمیشن میں شہری سے متعلق معلومات کی تصدیق، ووٹ کی رجسٹریشن اور منتقلی ایک طویل طریقہ کار رہا ہے مگر اب الیکشن کمیشن کی اس سسٹم کے ذریعے شہری سے متعلق معلومات تک براہ راست رسائی ہو جائے گی، اس سے ایک تو وقت کی بچت ہو گی دوسرے سسٹم خودکار طریقے سے نادرا سے تصدیق کرلے گا۔
الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق رزلٹ ٹرانسمیشن سسٹم کی تیاری کا عمل بھی جاری ہے، لیکن یہ انتخابات2018 تک ممکن ہے کہ تیار نہیں ہو سکے گا، الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 2013ءکے عام انتخابات میں اسلام آباد ہیڈ کوارٹر سے تمام پولنگ سٹیشن کے نتائج جاری کرنے کا سسٹم تیار کیا تھا مگر آخری مرحلے پر تکنیکی خامیوں کے سبب اس سسٹم کے تحت نتائج جاری کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا گیا تھا، اگرچہ نتائج جاری کرنے کے نئے نظام کو ضمنی انتخابات میں ٹیسٹ کیا گیا ہے لیکن اس نظام پر ابھی عملے کو تربیت دینے اور خودکار نگرانی کے عمل پر ابھی کام جاری ہے۔
اس سسٹم کے نافذ ہونے کے بعد ہرحلقے کے ریٹرننگ افسران کو انتخابی نتائج کا ڈیٹا اسلام آباد ہیڈکوارٹر فیکس کرنے کی ضرورت نہیں رہے گی، وہ صرف کمپیوٹرائز فارم 15اور 16حاصل کریں گے، جس پر ووٹر کی تصویر بنی ہو گی اور اسے اس سسٹم کے ذریعے اپنے حلقے میں آنے والے متعلقہ پولنگ سٹیشن کو منتقل کردیں گے، تاہم اس سارے عمل سے نتائج کو دستاویزی شکل میں مرتب کرنے کا کام معطل نہیں ہو گا، آر ٹی ایس کا نظام دستاویزی ریکارڈ کو سپورٹ کرنے کے لیے ہے، جس سے امید ہے کہ انتخابی نتائج کا نظام شفاف اور موثر ہو گا۔
 

اپنی رائے دیں

%d bloggers like this: